Saturday, March 2, 2024
الرئيسيةNewsقومی سلامتی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے مربوط بین الاقوامی...

قومی سلامتی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے مربوط بین الاقوامی کوششوں کی ضرورت : وزیر دفاع

نئی دہلی،10نومبر

راج ناتھ سنگھ نے کہا، نئی جہتیں ابھر رہی ہیں، سیکورٹی خطرات کی درجہ بندی کرنا مشکل مضبوط ہندوستان دوسروں کی نہیں بلکہ ہماری اپنی کوششوں سے بنے گا نئی دہلی، 10 نومبر (ہ س)۔ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے سائبر حملوں اور قومی سلامتی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے مربوط بین الاقوامی کوششوں کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ کچھ عرصہ پہلے تک سیکورٹی کو عام طور پر دو پہلوو¿ں سے دیکھا جاتا تھا۔ پہلی اندرونی سلامتی اور دوسری بیرونی سلامتی۔ داخلی سلامتی کا مطلب ہماری سرحدوں کے اندر سیکورٹی اور امن و امان کی بحالی کا انتظام ہے۔ بیرونی سلامتی کا مطلب ہے ہماری سرحدوں کی غیر ملکی افواج سے حفاظت۔ اب اندرونی اور بیرونی سلامتی کے درمیان خلیج کم ہوتی جا رہی ہے۔ سیکورٹی خطرات کی نئی جہتیں ابھر رہی ہیں جن کی درجہ بندی کرنا مشکل ہو رہا ہے۔ وزیر دفاع جمعرات کو نئی دہلی میں 60ویں نیشنل ڈیفنس کالج (این ڈی سی) کورس کانووکیشن کے دوران ہندوستانی مسلح افواج، سول سروسز کے ساتھ ساتھ دوست ممالک کے افسران سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ ملک کی تمام صلاحیتوں سے اس وقت فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے جب اس کے مفادات کا تحفظ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ تہذیب کے پھلنے پھولنے اور خوشحالی کے لیے سلامتی ضروری ہے۔ ایک مضبوط اور خوشحال ہندوستان کی تعمیر دوسروں کی قیمت پر نہیں ہوگی، بلکہ ہماری اپنی کوششوں سے ہوگی۔ ہندوستان دوسرے ممالک کو ان کی مکمل صلاحیتوں کا ادراک کرنے میں مدد کرنے کے لیے موجود ہے، اس لیے ہمیں سب کے لیے دوستانہ ماحول پیدا کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ انہوں نے روس-یوکرین جنگ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ روس اور یوکرین دنیا کی تقریباً ایک تہائی ضروریات کے لیے گندم اور جو برآمد کرتے ہیں لیکن اس تنازعے کی وجہ سے مختلف افریقی اور ایشیائی ممالک میں خوراک کا بحران پیدا ہوا۔ اس تنازع نے دنیا میں توانائی کے بحران کو بھی جنم دیا ہے۔ یورپ میں تیل اور گیس کی سپلائی کم ہو رہی ہے۔ ہندوستان بھی متاثر ہوا ہے کیونکہ روس-یوکرین جنگ کی وجہ سے بین الاقوامی توانائی کی سپلائی میں خلل پڑا، جس سے توانائی کی درآمدات بہت زیادہ مہنگی ہو گئیں۔ اصل سوال یہ ہے کہ اگر ہمیں ایسے سنگین سیکورٹی چیلنجز کا سامنا ہے تو ہم ان سے کیسے نمٹیں گے۔ راج ناتھ سنگھ نے روس اور یوکرین کے درمیان جاری تنازعہ میں معلوماتی جنگ کے کردار کو واضح کرتے ہوئے کہا کہ اس سے سیاسی استحکام کو خطرہ لاحق ہے۔ سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ذریعے معاشرے میں فیک نیوز اور نفرت انگیز مواد لانے کے امکان کا کوئی حساب نہیں ہے۔ توانائی کا شعبہ سائبر حملوں کے اہم اہداف میں سے ایک ہے، لیکن نقل و حمل، پبلک سیکٹر کی خدمات، ٹیلی کمیونیکیشن اور اہم مینوفیکچرنگ انڈسٹریز بھی خطرے سے دوچار ہیں۔ ہمیں سائبر وارفیئر اور انفارمیشن وارفیئر سمیت سیکیورٹی خطرات کا سامنا ہے۔ اس لیے سائبر حملوں اور قومی سلامتی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے مربوط بین الاقوامی کوششوں کی ضرورت ہے۔ اپنے خطاب کے آخر میں، وزیر دفاع نے تمام کیڈٹس کو اپنی نیک خواہشات کا اظہار کیا اور اس اعتماد کا اظہار کیا کہ آپ اپنے اور ملک کی شہرت کا ذریعہ بنیں گے۔ ایسا کرنے سے آپ اس ملک اور این ڈی سی دونوں کو فخرکا موقع فراہم کریں گے۔ کانووکیشن کی تقریب میں 60ویں این ڈی سی کورس (2020 بیچ) کے 80 افسران کو مدراس یونیورسٹی سے ایم فل کی باوقار ڈگری سے نوازا گیا۔ اپنے خطاب میں لیفٹیننٹ جنرل ایم کے ماگو، کمانڈنٹ، این ڈی سی نے این ڈی سی کے متحرک تعلیمی ماحول پر روشنی ڈالی۔ سکریٹری دفاع گریدھر ارمانے، مدراس یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر۔ (ڈاکٹر) ایس گوری اور دیگر معززین موجود تھے۔

 

RELATED ARTICLES

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

Most Popular

Recent Comments