Tuesday, April 16, 2024
الرئيسيةNewsقطر میں آج شام فٹ بال کے مہاکمبھ کا آغاز

قطر میں آج شام فٹ بال کے مہاکمبھ کا آغاز

دوحہ (قطر)، 20 نومبر  ۔

دوحہ کے البیت اسٹیڈیم میں اتوار کی شام میزبان قطر اور ایکواڈور کے درمیان ہونے والے میچ سے فٹ بال کا شاندار آغاز ہوگا۔ اگلے 28 دنوں تک دنیا کی بہترین 32 ٹیمیں ٹرافی جیتنے کی پوری کوشش کریں گی۔ فٹ بال کی تاریخ میں پہلی بار ورلڈ کپ نومبر دسمبر میں منعقد کیا جا رہا ہے۔

اس سال ورلڈ کپ کی خاص بات یہ ہے کہ ارجنٹائن کے کپتان لیونل میسی اور پرتگال کے کپتان کرسٹیانو رونالڈو اپنا آخری ورلڈ کپ کھیلیں گے۔ دونوں کھلاڑی اپنا پانچواں فیفا ورلڈ کپ کھیلنے والے ہیں۔ میسی نے فیفا ورلڈ کپ میں 19 میچز کھیلے ہیں۔ اس نے 6 گول کیے ہیں اور 5 گولوں میں کردار ادا کیا ہے۔ رونالڈو نے فیفا ورلڈ کپ کے 17 میچوں میں 7 گول کیے ہیں اور 2 گول میں معاونت کی ہے۔

فیفا ورلڈ کپ کا افتتاح شام ساڑھے سات بجے ہونا ہے۔ اس بار ورلڈ کپ میں آٹھ گروپس ہیں۔ گروپ اے میں میزبان قطر کے ساتھ ایکواڈور، سینیگال اور نیدرلینڈز شامل ہیں۔ گروپ بی انگلینڈ، ایران، امریکا اور ویلز پر مشتمل ہے۔ گروپ سی میں ارجنٹائن، سعودی عرب، میکسیکو اور پولینڈ کو رکھا گیا ہے۔ گروپ ڈی میں فرانس، آسٹریلیا، ڈنمارک اور تیونس ہیں۔ گروپ ای میں اسپین، کوسٹاریکا، جرمنی اور جاپان شامل ہیں۔ گروپ ایف میں بیلجیئم، کینیڈا، مراکش اور کروشیا کو رکھا گیا ہے۔ گروپ جی برازیل، سربیا، کیمرون اور سوئٹزرلینڈ پر مشتمل ہے۔ گروپ ایچ میں پرتگال، گھانا، یوروگوئے اور جنوبی کوریا شامل ہیں۔

1982 کے بعد پہلی بار انگلینڈ کا مقابلہ کسی ایشیائی ملک سے ہوگا۔ یہ میچ انگلینڈ اور ایران کے درمیان ہونا ہے۔ اس بار قطر میں نیم خودکار آف سائٹ ٹیکنالوجی استعمال کی جائے گی۔ یہ ریفری کو درست اور فوری فیصلے کرنے کے قابل بنائے گا۔ فیفا نے قطر ورلڈ کپ کے لیے فرانس کی اسٹیفنی فریپارٹ، جاپان کی یاماشیتا یوشیمی اور روانڈا کی سلیمہ مکانسانگا کو بطور ریفری منتخب کیا ہے۔ اس کے علاوہ امریکہ کے اسماعیل الفاتھ، کیتھرین نیسبٹ اور آسٹریلیا کے کرس بیتھ اسسٹنٹ ریفری ہوں گے۔ جیتنے والی ٹیم کو 42 ملین ڈالر (تقریباً 342 کروڑ روپے) ملیں گے۔ یہ رقم پچھلے کپ سے 4 ملین ڈالر زیادہ ہے۔ رنر اپ کو 245 کروڑ روپے ملیں گے۔ پہلی بار کسی عرب ملک کو فیفا ورلڈ کپ کی میزبانی ملی ہے جبکہ یہ دوسرا موقع ہے کہ کوئی ایشیائی ملک اس کی میزبانی کر رہا ہے۔ اس سے قبل 2002 میں جنوبی کوریا اور جاپان نے مشترکہ طور پر ورلڈ کپ کی میزبانی کی تھی۔

RELATED ARTICLES

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

Most Popular

Recent Comments