Saturday, March 2, 2024
الرئيسيةNewsانتخابات میں مودی کو گالی دینا اور ای وی ایم میں خامیاں...

انتخابات میں مودی کو گالی دینا اور ای وی ایم میں خامیاں تلاش کرنا کانگریس کا کام : نریندر مودی

احمد آباد، 2 دسمبر

۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعہ کو گجرات اسمبلی انتخابات کے دوسرے مرحلے کے لئے بی جے پی امیدواروں کے حق میں چار اضلاع میں انتخابی جلسے کیے۔ انہوں نے اپنی مہم میں کانگریس پر شدید حملہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ مودی کو گالی دینا اور ای وی ایم میں خامیاں تلاش کرنا کانگریس کا کام ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ گجرات میں مکمل اکثریت کے ساتھ بی جے پی کی حکومت بن رہی ہے۔

جمعہ کو نریندر مودی نے گجرات کے بناسکانٹھا کے کانکریج، پاٹن، آنند کے سوجیترا اور احمد آباد میں انتخابی مہم چلائی ۔پاٹن میں کانگریس پر حملہ کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ ان کے پاس صرف دو کام ہیں، ای وی ایم میں خرابی تلاش کرنا اور مودی کو گالی دینا۔ سماج میں خواتین کے کردار کو بااختیار بنانے کے لیے بی جے پی حکومت کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات کے بارے میں بات کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ بی جے پی حکومت نے بیٹی بچاو¿، بیٹی پڑھاو¿ سے لے کر فوج میں بیٹیوں کی بھرتی تک کئی بے مثال فیصلے کیے ہیں۔ پاٹن علاقے کے باجرا کاشتکاروں کو انٹرنیشنل ایئر آف ملیٹس کے ذریعہ بڑے پیمانے پر مستفید ہونے کی بات کہی۔ مودی نے کہا کہ کانگریس کی حکومت میں پاٹن-بھیلڑی لائن اور موڈاسا کپڑ ونج ریلوے لائن کے لیے تحریک چلی تھی۔ کانگریس والوں کو تحریک کی کوئی فکر نہیں تھی۔ آج بی جے پی نے پاٹن کو جودھپور سے جوڑا ہے۔

پاٹن شمسی توانائی کا ایک بڑا مرکز ہے

پاٹن ملک میں بڑے شمسی انقلاب کا مرکز بن گیا ہے۔ چانسکا میں ملک کا سب سے بڑا سولر پلانٹ لگایا گیا ہے۔ آنے والے دنوں میں پاٹن گرین ہائیڈروجن کا ہیڈ کوارٹر بن جائے گا۔ گاڑیاں پیٹرول پر نہیں بلکہ گرین ہائیڈروجن پر چلیں گی۔ جلسہ عام میں مودی نے گجرات میں پچھلے 20 سالوں میں کئے گئے ترقیاتی کاموں کا ذکر کیا۔ مودی نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ ہر خاندان، ہر کسان شمسی توانائی سے بجلی پیدا کرے۔ اس کے لیے حکومت سبسڈی دے رہی ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ سیاحت میں گجرات کی ناقابل استعمال صلاحیت کو فروغ دیا جا رہا ہے اور اس سے نوجوانوں کے لیے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔

کانگریس کی پالیسی تقسیم کرنے کی

آنند ضلع کے سوجیترا میں خطاب کرتے ہوئے مودی نے کہا کہ ماضی میں کانگریس کی تقسیم کی پالیسی کی وجہ سے گجرات کمزور ہونے لگا تھا۔ ریاست ترقی کے کئی معاملات میں پیچھے تھی۔ اس کا فائدہ ایسے لوگوں نے اٹھایا جو ریاست کے امن و امان کی راہ میں رکاوٹ تھے۔ کھمبھاٹ میں بار بار ہونے والے فرقہ وارانہ فسادات پر بحث کرتے ہوئے انہوں نے سوال کیا کہ کیا آنند اور کھمبھاٹ کو اس سے بچایا گیا؟ لوگوں کے اتحاد کو توڑ دیا گیا، لیکن گزشتہ 25 سال سے اتحاد کی وجہ سے بی جے پی نے حالات بدل دیے۔

RELATED ARTICLES

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

Most Popular

Recent Comments