Sunday, March 3, 2024
الرئيسيةNewsگیانواپی کیس: مسلم فریق کو جھٹکا، وارانسی کی عدالت میں کیس قابل...

گیانواپی کیس: مسلم فریق کو جھٹکا، وارانسی کی عدالت میں کیس قابل سماعت قرار

وارانسی، 17 نومبر

گیانواپی معاملے میں وارانسی کی عدالت نے مسلم فریق کی عرضی کو مسترد کر دیا ہے۔ عدالت نے اس معاملے کو قابل سماعت قرار دیا اور اسی بنیاد پر مسلمانوں کی در یخواست کو خارج کر دیا۔ مسلم فریق کی جانب سے اصرار کیا گیا تھا کہ گیانواپی کیس میں ہندو فریق کی عرضی پر سماعت نہ کی جائے، لیکن عدالت نے واضح کیا کہ اس درخواست پر سماعت ممکن ہے۔ اسی وجہ سے مسلم فریق کی درخواست کو مسترد کر دیا گیا ہے۔

اس معاملے کی سماعت سول جج سینئر ڈویژن مہیندر کمار پانڈے کی عدالت نے 14 نومبر کو کی تھی۔ پھر فیصلہ محفوظ کر لیا گیا تھا ۔ سماعت کے دوران مسلم فریق کی جانب سے کہا گیا کہ ضلع جج کی عدالت میں شرنگار گوری معاملہ صرف باقاعدہ عبادت سے متعلق تھا، جب کہ اس معاملے میں یہ گیانواپی مسجد کے عنوان سے متعلق ہے۔ اس لیے اسے پوری امید تھی کہ عدالت اس کیس کو خارج کر دے گی۔ لیکن فی الحال عدالت اس معاملے میں مزید سماعت کرنے جا رہی ہے۔

ہندو فریق کے وکیل انوپم دیویدی نے بتایا کہ اگلی تاریخ 2 دسمبر رکھی گئی ہے تب اس کیس کی سماعت شروع ہوگی۔ وشو ویدک سناتن سنگھ کے ایگزیکٹو صدر سنتوش سنگھ نے بتایا کہ یہ ہماری بڑی جیت ہے، اب سماعت کے بعد ہمارے مطالبات بھی مان لیے جائیں گے، یہی امید ہے۔

ہندو فریق کا مطالبہ کیا ہے؟

یہاں یہ سمجھنا ضروری ہے کہ سماعت کے دوران ہندو فریق کی جانب سے چار اہم مطالبات رکھے گئے تھے۔ ان مطالبات میں لارڈ آدی وشویشور شمبھو ویراجمان کی باقاعدہ پوجا فوری اثر سے شروع کرنا، پورے گیانواپی کمپلیکس میں مسلمانوں کے داخلے پر پابندی لگانا، پورے گیانواپی کمپلیکس کو ہندوؤں کو دینا، مندر کے اوپر بنائے گئے متنازعہ ڈھانچے کو ہٹانا شامل ہیں۔

اب یہ مطالبات مانے جاتے ہیں یا نہیں، یہ تو آنے والے دنوں میں ہونے والی سماعت کے بعد ہی واضح ہو گا، لیکن ہندو فریق کے لیے راحت کی بات ہے کہ اب عدالت اس معاملے کی سماعت کرنے جا رہی ہے۔ مسلم فریق چاہتا تھا کہ سماعت نہ کی جائے، وہ مطالبہ مسترد کر دیا گیا ہے۔ اگرچہ ایک طرف وارانسی کی فاسٹ ٹریک کورٹ میں سماعت ہوگی، وہیں دوسری جانب اگلے سال جنوری میں سپریم کورٹ میں بھی ایک اہم سماعت ہونے والی ہے۔

سپریم کورٹ میں کیس چل رہا ہے

دراصل، عبادت گاہوں کے قانون کو لے کر سپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کی گئی ہے۔ وہ عرضی بھی گیانواپی کیس سے متعلق ہے۔ اس صورت میں مرکزی حکومت کو 12 دسمبر تک اپنا جواب داخل کرنا ہوگا۔ جس کے بعد کیس کی سماعت آئندہ سال جنوری میں ہوگی۔ عبادت گاہ (خصوصی انتظامات) ایکٹ 1991 کے سیکشن 3 میں کہا گیا ہے کہ عبادت گاہوں کی حفاظت کی جائے گی جیسا کہ وہ 15 اگست 1947 کو تھیں ۔ اگر یہ ثابت بھی ہو جائے کہ موجودہ مذہبی مقام تاریخ میں کسی اور مذہبی مقام کو گرا کر بنایا گیا تھا، تب بھی اس کی موجودہ شکل نہیں بدلی جا سکتی۔

RELATED ARTICLES

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

Most Popular

Recent Comments