Monday, February 26, 2024
الرئيسيةUncategorizedمہنگائی اور بے روزگاری کی وجہ سے ملک میں نفرت بڑھ رہی...

مہنگائی اور بے روزگاری کی وجہ سے ملک میں نفرت بڑھ رہی ہے: راہل گاندھی

نئی دہلی، 04 ستمبر

کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے اتوار کو مہنگائی اور بے روزگاری کو لے کر مرکزی حکومت کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ مہنگائی اور بے روزگاری کے خوف سے عوام میں نفرت بڑھ رہی ہے۔ نفرت سے ملک کو کوئی فائدہ نہیں ہوتا بلکہ اس سے ملک کمزور ہی ہوتا ہے۔

کانگریس کے رکن پارلیمنٹ راہل گاندھی آج دہلی کے رام لیلا میدان میں پارٹی کی جانب سے منعقدہ ریلی سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے ریلی میں مودی حکومت پر جم کر حملہ کیا۔ وزیر اعظم نریندر مودی اور بی جے پی پر خوف اور نفرت پھیلا کر ملک کو کمزور کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کانگریس لیڈر نے کہا کہ ملک میں مستقبل کا خوف، مہنگائی کا خوف اور بے روزگاری کا خوف بڑھ رہا ہے۔ اس کی وجہ سے نفرت بڑھ رہی ہے۔ نفرتوں سے لوگ تقسیم ہوتے ہیں اور ملک کمزور ہو جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے ہندوستان کو نہیں بلکہ چین اور پاکستان کو فائدہ ہوگا۔

اپوزیشن کو پارلیمنٹ میں بولنے کا موقع نہ دینے کا الزام لگاتے ہوئے کانگریس لیڈر نے کہا کہ اپوزیشن کے پاس واحد آپشن رہ گیا ہے کہ وہ عوام کے درمیان جا کر ملک کی سچائی بتائے۔ یہی وجہ ہے کہ کانگریس پارٹی 7 ستمبر سے ‘بھارت جوڑو یاترا’ شروع کر رہی ہے جس سے عوام سے براہ راست بات چیت کرنے اور ان کے مسائل پر بات چیت کرنے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ صرف کانگریس ہی ملک کو متحد کر سکتی ہے اور اسے ترقی کی راہ پر لے جا سکتی ہے۔انہوں نے مودی حکومت پر گزشتہ 7-8 سالوں میں صرف دو بڑے صنعت کاروں کو فائدہ پہنچانے کا الزام لگایا اور کہا کہ یہ دونوں وزیر اعظم اوروزیراعظم ان کے لیے 24 گھنٹے کام کر رہے ہیں۔ گاندھی نے کہا کہ ملک میں پھیلائی جا رہی اس نفرت اور خوف سے صرف یہی دو صنعتکار فائدہ اٹھا رہے ہیں اور بی جے پی ان کے فائدے کے لیے کام کر رہی ہے۔ یہ دونوں صنعتکار ایئرپورٹ، بندرگاہ، سڑکیں، تیل، ہر چیز پر قابض ہیں۔ ملک کے بڑے صنعت کاروں کے قرضے تو معاف ہو رہے ہیں لیکن کسانوں کا خیال رکھنے والا کوئی نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی حالت ایسی ہے کہ وہ چاہے تو اپنے نوجوانوں کو روزگار نہیں دے سکتا۔

گاندھی نے یہ بھی الزام لگایا کہ تینوں زرعی قوانین کسانوں کی مدد کے لیے نہیں بلکہ کچھ صنعت کاروں کو فائدہ پہنچانے کے لیے لائے گئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کسان تین زرعی قوانین کے خلاف سڑک پر نہ آتے تو یہ حکومت کسانوں کو تباہ کر دیتی۔راہل نے کہا کہ مودی حکومت چھوٹے تاجروں اور دکانداروں کو پریشان کر رہی ہے۔ یہ حکومت چھوٹے پیمانے کی صنعت کو بہت نقصان پہنچا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں بے روزگاری مزید بڑھے گی۔ پٹرول، ڈیزل، کھانا پکانے کی گیس، دودھ، دہی سب کچھ عام لوگوں کے بجٹ سے باہر ہو رہا ہے۔ راہل نے کہا کہ ملک کا عام شہری کافی پریشانی میں ہے۔ جب اپوزیشن پارلیمنٹ میں یہ مسئلہ اٹھاتی ہے تو وہاں بولنے کی اجازت نہیں ہوتی۔ مودی حکومت میڈیا کو بھی بولنے نہیں دے رہی ہے۔ میڈیا اب صنعت کاروں کے ہاتھ میں ہے۔ لیکن عوام جانتی ہے کہ میڈیا کس کے لیے کام کر رہا ہے۔

راہل نے کہا کہ ملک کی حکومت دو صنعتکار چلا رہے ہیں۔ پی ایم مودی ان کے تعاون کے بغیر حکومت نہیں چلا سکتے۔ یہ حکومت تحقیقاتی ایجنسیوں کا غلط استعمال کر رہی ہے۔ راہل نے کہا کہ ای ڈی نے ان سے 55 گھنٹے تک پوچھ گچھ کی، لیکن آئین کو بچانے کی اس لڑائی میں وہ مضبوطی سے کھڑے ہوں گے اور ملک کے عام لوگوں کو بھی اس لڑائی میں حصہ لینا ہوگا۔راہل نے کہا کہ آج ملک میں دو ہندوستان ہیں، ایک غریبوں کا ہندوستان اور دوسرا امیروں کا ہندوستان۔ امیر ہندوستان میں چند ہی منتخب لوگ ہیں۔ راہل نے کہا کہ یو پی اے نے کسانوں کے قرض معاف کئے اور مودی حکومت نے تین کالے قانون دیئے۔ یو پی اے نے منریگا قانون لا کر غریبوں کو عزت کے ساتھ جینے کا حق دیا اور مودی حکومت نے اس اسکیم کو روکنے کی کوشش کی۔

راہل نے کہا کہ یو پی اے نے 10 سالوں میں 27 کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالا اور مودی حکومت نے 23 کروڑ لوگوں کو غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور کیا۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں اس وقت بے روزگاری سب سے زیادہ ہے لیکن یہ حکومت ان مسائل پر بولنے کو تیار نہیں۔ 

RELATED ARTICLES

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

Most Popular

Recent Comments